April 14, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/pldtvibe.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
صورة من شاطئ غزة تظهر بناء رصيف مؤقت (رويترز)

ایسا لگتا ہے کہ ایک اسرائیلی اہلکار کے وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کی طرف سے جنگ کے بعد فلسطینیوں کو غزہ کی پٹی کا انتظام کرنے سونپنے سے انکار کا جو مذاق اڑایا گیا تھا وہ سچ ثابت ہوتا دکھائی دے رہا ہے۔

اسرائیلی حکام نے کہا تھا کہ نیتن یاھو “سوئٹزر لینڈ کی سکیورٹی فورسز” کی تلاش میں ہیں۔ اگرچہ یہ بات ایک طنز تھی مگر کسی حد تک یہ بات درست اور سچ بھی ثابت ہوتی دکھائی دے رہی ہے۔

اسرائیلی حکومت نے کچھ عرصہ قبل غزہ میں انسانی امداد کی ترسیل کے تحفظ کے لیے نجی بین الاقوامی سکیورٹی کنٹریکٹرز کی خدمات حاصل کرنے کے امکان پر غور شروع کیا گیا تھا۔ جس کی تصدیق ایک سابق امریکی اہلکار اور دو موجودہ اہلکاروں نے بھی کی تھی۔

انہوں نے وضاحت کی کہ امریکی انتظامیہ کے کچھ اہلکار غزہ میں زمین پر امریکی افواج یا سکیورٹی کنٹریکٹر بھیجنے سے ہچکچاتے ہیں اور امریکی افواج فلسطینی پٹی میں سیکورٹی فراہم کرنے یا یہاں تک کہ عارضی فٹ پاتھ کی تعمیر کے بارے میں فکر مند ہیں۔

نجی سکیورٹی کمپنیاں

اس کے علاوہ انہوں نے انکشاف کیا کہ اسرائیلی حکومت پہلے ہی کئی نجی سکیورٹی کمپنیوں سے رابطہ کر چکی ہے لیکن انہوں نے ان کمپنیوں کی شناخت کرنے سے انکار کر دیا۔

انہوں نے بتایا کہ اسرائیلیوں نے دوسرے ممالک کو ان ٹھیکیداروں کی بھاری قیمت ادا کرنے کا بھی لالچ دیا۔

یہ خیال چند ہفتے قبل پیش کیا گیا تھا جب بائیڈن انتظامیہ نے کہا تھا کہ وہ غزہ کے ساحل پر ایک تیرتی گودی قائم کرے گا تاکہ وہ قبرص سے سمندر کے پار امداد پہنچا سکے۔

غزہ کا ساحل: رائیٹرز

غزہ کا ساحل: رائیٹرز

قابل ذکر ہے کہ پہلا انسانی امدادی بحری جہاز کل جمعہ کو قبرص اور غزہ کی پٹی کے درمیان سمندری گذرگاہ کے ذریعے 200 ٹن خوراک اور امدادی سامان لے کر غزہ پہنچا۔

یہ جہاز متحدہ عرب امارات، قبرص اور ورلڈ سینٹرل کچن ریلیف آرگنائزیشن کے تعاون سے لارناکا کی بندرگاہ سے روانہ ہوا، جس میں چاول، آٹا، دالیں،پیک شدہ سبزیاں اور پروٹین شامل ہیں۔

یہ اس وقت سامنے آیا جب پینٹاگان نے اعلان کیا کہ عارضی گودی کی تعمیر میں 60 دن لگیں گے، جس میں تقریباً 1,000 امریکی فوجی شامل ہوں گے، اور یہ فوجی بعد میں ساحل پر قدم رکھے بغیر چھوٹی کشتیوں پر غزہ تک امداد پہنچائیں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *