April 23, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/pldtvibe.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
Police officers detain demonstrators in St. Petersburg, Russia, on Thursday. Hundreds of people gathered in Moscow and St.Petersburg to protest against Russia’s attack on Ukraine. (AP)

یوکرین میں روسی جنگ کے دوسال مکمل ہونے پر کریملن میں فوجیوں کی بیگمات نے ہفتے کے روز احتجاج کیا ہے۔احتجاج جرنے والی خواتین مطالبہ کر رہی تھیں کہ ان کے شوہروں کو یوکرین کی جنگ سے واپس بلایا جائے۔ اس موقع پر صحافیوں سمیت متعدد کو روسی پولیس نے حراست میں لے لیا

ایک آزاد میڈیا ہاؤس کی طرف سے نشر کی گئی ایک ویڈیو میں دکھایا گیا ہے کہ پولیس نے پیلی واسکٹ زیب تن کیے ہوئے دو صحافیوں کو حراست میں لے لیا۔ علاوہ ازیں دو مزید افراد بھی گرفتار کر لیے گئے۔

واضح رہے اسی ماہ کے شروع میں، پولیس نے احتجاج میں تقریباً 20 اخباری رپورٹرز کو حراست میں لے لیا، پولیس نے میڈیا سے متعلق اداروں کو اس طرح کے احتجاجی مظاہروں کی کوریج روکا جائے۔ پولیس نے اس سلسلے میں بین الاقوامی خبر رساں ادارے ‘ اے ایف پی ‘ کو بھی مظاہروں کی کوریج کرنے انتباہ کے انداز میں گریز کا مشورہ دیا تھا۔

یوکرین میں روسی جنگ کو امریکہ اور مغربی ممالک روکنے کے خواہاں ہیں۔ وہ اس جنگ میں روس کو شکست دینے کے لیے اسلحہ اور گولہ بارود کے علاوہ مالی امداد کے ساتھ ساتھ سفارتی مدد کے لیے بھی کوشاں رہتے ہیں۔ اتفاق سے یہ ممالک خصوصاً امریکہ غزہ میں جنگ بندی کی حمایت کو تیار نہیں ہے۔

روس کی یوکرین میں جنگ کے دو سال مکمل ہونے پر خواتین کے احتجاج کی کال دینے والوں خواتین کی مختلف تنظیموں کی طرف سے دی گئی تھی۔ کال میں کہا گیا تھا کہ احتجاج دوپہر کے وقت ہونے کا اعلان کیا گیا تھا۔روسی فوجیوں کی بیگمات کے اس احتجاج کو اس ۔ عنوان کے ساتھ کر رہی تھیں کہ ‘ دی وے ہوم’ یعنی یوکرین میں لڑنے والے فوجیوں کو واپس لایا جائے۔’

نشر کردہ ویڈیو حراست میں لی گئی ایک خاتون کو دکھا رہی ہے جو کہہ رہی ہے کہ ‘ تم مجھے کیون گرفتار کر رہے ہو۔؟’ اسی ویڈیو میں ایک احتجاج کرنے والے ایسے شہری کو دکھایا گیا ہے جو پھول پکڑے جا رہا ہے۔ مگر پولیس اسے گرفتار کررہی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *