April 20, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/pldtvibe.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
Palestinians walk by a residential building destroyed in an Israeli strike in Rafah, Gaza Strip, Sunday, Feb. 11, 2024. (AP Photo/Hatem Ali)

اقوام متحدہ نے ایک بار پھر غزہ میں جنگ سے متاثرہ لاکھوں فلسطینیوں کو مصر کے جزیرہ نما سینا کی طرف دھکیلنے کے سنگین نتائج سے خبردار کیا ہے۔

اقوام متحدہ کی طرف سے یہ انتباہ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب جنوبی غزہ کے گنجان آباد علاقے رفح میں اسرائیلی فوج حماس کے خلاف زمینی فوجی کارروائی کی تیاری کررہی ہے۔ اقوام متحدہ کا انتباہ اس لیے بھی اہن ہے کیونکہ رفح میں تقریبا چودہ لاکھ بے گھر فلسطینی انتہائی نا مساعد حالات میں رہ رہے ہیں۔

اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین فلپو گرانڈے نے جمعہ کے روز کہا کہ غزہ میں رفح سے مصر فلسطینیوں کو دھکیلنا ایک نئی تباہی کا باعث بنے گا۔

انہوں نے کہا کہ مصری حکام نے یہ واضح کردیا ہے کہ لوگوں کو پٹی کے اندر مدد کی جانی چاہیئے فلسطینی آبادی کو سرحد پار نقل مکانی پر مجبور کرنے کو قبول نہیں کیا جائے گا۔

امن کا مستقبل

اقوام متحدہ کے عہدیدار نے میونخ میں سکیورٹی کانفرنس کے موقعے پر ’رائٹرز‘ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ غزہ سے فلسطینیوں کی جبری بے دخلی کو’انسانی تباہی‘ قرار دیا۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ نہ صرف فلسطینیوں کے لیے بلکہ مصر کے مستقبل کے لیے بھی تباہ کن ہوگا۔

اس سوال کے جواب میں کہ کیا مصری حکام نے ہنگامی منصوبوں پر اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین سے رابطہ کیا تھا تو انہوں نے کہا کہ “مصریوں نے کہا ہے کہ غزہ کے اندر لوگوں کی مدد کی جانی چاہئے اور ہم اس پر کام کر رہے ہیں”۔

اقوام متحدہ کے امدادی کوآرڈینیٹر نے جمعرات کو فلسطینیوں کی آمد کے امکان کے بارے میں بھی متنبہ کیا تھا جو رفح میں اسرائیلی فوجی کارروائی کی صورت میں مصر کی طرف نقل مکانی کرسکتے ہیں۔

اقوام متحدہ کے سینیر عہدیدار مارٹن گریفیتھس نے جنیوا میں اقوام متحدہ کے اجلاس میں کہا کہ غزہ میں لوگوں کی محفوظ مقام پر منتقلی محض خیالی باتیں ہیں۔ اسرائیلی وزیراعظم نے پہلے بھی کئی بار ایسا کرنے کی یقین دہانی کرائی مگر غزہ میں لوگوں کے لیے محفوظ مقامات پر نہیں لے جایا گیا۔

سات اکتوبر کو غزہ میں جنگ شروع ہونے کے بعد مصر نے بار بار فلسطینیوں کی جبری بےدخلی اور انہیں جزیرہ سینا کی طرف دھکیلنے کے سنگین نتائج سے خبردار کیا ہے۔ مبصرین کا خیال ہے کہ اسرائیل نے غزہ لے لاکھوں لوگوں کو جزیرہ سیناء کی طرف منتقل کرنے کا منصوبہ پہلے ہی بنا لیا تھا۔

امن معاہدے کو معطل کرنے کی دھمکی

مصری حکام نے متعدد مرتبہ اسرائیل کو فلسطینیوں کو جبری بے گھر کرنے کے منصوبوں سے خبردار کیا تھا۔

حال ہی میں مصری وزیر خارجہ کے وزیر خارجہ سامح شکری نے سرکاری طور پر اس معاملے کی تردید کی تھی کہ قاہرہ اسرائیل کے ساتھ “کیمپ ڈیوڈ” معاہدے کو معطل کرنے کا سوچ رہا ہے۔

تاہم بعض مصری عہدیداروں نے کہا تھا کہ اگر اسرائیل نے غزہ سے فلسطینیوں کو مصر کی طرف دھکیلا تو اس کے ساتھ برسوں پہلے طے پائے امن معاہدے کو معطل کیا جائے گا۔

اسرائیل خان یونس کے بعد اسرائیلی فوج رفح میں حماس کے رہ نماؤں کے خلاف حملے کی تیاری کررہی ہے۔ اسرائیل کا دعویٰ ہے کہ حماس کے سینیر رہ نما یحییٰ السنوار اور دیگررہ نما رفح کی سرنگوں میں موجود ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *