April 21, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/pldtvibe.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
صورة نشرتها القيادة المركزية الأميركية لضبط سفينة أسلحة إيرانية

واشنگٹن نے اعلان کیا ہے کہ امریکی بحریہ کے ایک جہاز نے ایران سے آنے والے جدید روایتی ہتھیاروں اور مہلک امداد کی ایک کھیپ کو ضبط کر لیا ہے۔ یہ کھیپ یمن میں حوثیوں کے زیر کنٹرول علاقوں کی طرف لے جائی جارہی تھی۔

مشرق وسطیٰ میں امریکی سینٹرل کمانڈ نے “X” پر ایک بیان میں کہا کہ یہ کھیپ گزشتہ 28 جنوری کو بحیرہ عرب میں ضبط کی گئی تھی۔ سینٹ کام نے اسحلہ کی تصاویر بھی پوسٹ کیں۔

اس کھیپ میں “200 سے زیادہ پیکجز شامل تھے جن میں درمیانے فاصلے تک مار کرنے والے بیلسٹک میزائلوں کے اجزا، دھماکہ خیز مواد، بغیر پائلٹ سمندری ڈرون کے اجزا، مواصلاتی آلات اور فوجی نیٹ ورکس، اینٹی ٹینک گائیڈڈ میزائل لانچر کٹس اور دیگر فوجی اجزاء شامل تھے۔ بیان میں امریکی سینٹرل کمانڈ کے کمانڈر مائیکل ایرک کوریلا کے حوالے سے کہا گیا کہ “یہ خطے میں ایران کی بدنیتی پر مبنی سرگرمیوں کی ایک اور مثال ہے۔”

مائیکل ایرک کوریلا نے مزید کہا “ہم اپنے اتحادیوں اور شراکت داروں کے ساتھ مل کر خطے میں امریکی اور اقوام متحدہ کی پابندیوں سمیت تمام جائز طریقوں سے اور مداخلتی کارروائیوں کے ذریعے ہلاکت خیز ایرانی امداد کے بہاؤ کا مقابلہ کرنے کے لیے پرعزم ہیں۔”

انہوں نے نشاندہی کی کہ ایران کی طرف سے حوثیوں کو جدید روایتی ہتھیاروں کی مسلسل فراہمی بین الاقوامی قانون کی براہ راست خلاف ورزی ہے۔ یہ صورت حال بین الاقوامی جہاز رانی کے تحفظ اور تجارت کے آزادانہ بہاؤ کو نقصان پہنچا رہی ہے۔

یاد رہے غزہ جنگ شروع ہونے کے بعد سے بحیرہ احمر میں عالمی جہاز رانی کی آمدورفت میں خلل پڑا ہے کیونکہ حوثی گروپ تجارتی بحری جہازوں کو نشانہ بنا رہا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *